دہلی میں دسویں اوربارہویں جماعت کے لیے اسکول کھولنے کافیصلہ

دہلی میں دسویں اوربارہویں جماعت کے لیے اسکول کھولنے کافیصلہ
نئی دہلی13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
دہلی حکومت نے دسویں اوربارہویں جماعت کے لیے اسکول کھولنے کا حکم دیا ہے۔ یہ اسکول 18 جنوری سے کھل جائیں گے۔یہ فیصلہ بورڈامتحانات کی تیاریوں کے پیش نظر لیا گیا ہے۔ حال ہی میں دہلی کے نائب وزیراعلیٰ اوروزیرتعلیم منیش سسودیا نے کہاہے کہ ہم بورڈ امتحان کے پیش نظر اسکول کھولنے پر غور کر رہے ہیں۔اس سلسلے میں وزیر تعلیم منیش سسودیانے ٹویٹ کیا ہے کہ دہلی میں سی بی ایس ای بورڈ کے امتحانات اورپریکٹیکل کو دیکھتے ہوئے ، 18 جنوری سے 10 ، 12 اور 12 ویں کلاس کے لیے اسکول کھولنے کی اجازت دی جارہی ہے۔ بچوں کو صرف والدین کی رضامندی سے ہی بلایاجاسکتاہے۔بچے آنے پر مجبور نہیں ہوں گے۔دہلی میں کورونا وبا کے پیش نظر 16 مارچ 2020 کو کجریوال حکومت نے تمام اسکولوں کو بند رکھنے کا حکم دیا تھا۔ اس کے بعد دارالحکومت کے تمام اسکول بندہیں۔ اگرچہ آن لائن کلاسز چل رہی ہیں۔اب اسکول کھولنے کا حکم کورونا کی رفتار اور کورونا ویکسینیشن کے آغازکے ساتھ ہی جاری کیا گیا ہے۔حکومت پنجاب نے 7 جنوری سے ریاست کے تمام اسکولوں کو دیئے گئے ہیں۔ تمام سرکاری ، نیم سرکاری اور تمام نجی اسکول کھل رہے ہیں۔ اسکولوں کے کھلنے کے اوقات صبح 10 بجے سے شام 3 بجے تک ہیں۔اس وقت 5 سے 12 جماعت کے طلبا کو اسکول جانے کی اجازت ہے۔ گجرات میں بھی 11 جنوری سے ، دسویں اوربارہویں جماعت کے بچے اسکول آرہے ہیں۔
بغیرفائنل ٹرائل کے ویکسین کیوں؟کانگریس نے گھیرا
نئی دہلی13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
ملک میں 16 جنوری سے کورونا ویکسین تیار کی جارہی ہے۔ ویکسین کی کھیپ مختلف حصوں تک پہنچ رہی ہے۔ ادھر کانگریس نے ایک بار پھر ہنگامی استعمال کے لیے بھارت بائیوٹیک کی ویکسین کی منظوری پر سوالات اٹھائے ہیں۔اوریہ بھی سوال کیاہے کہ جب یہ صرف ہنگامی استعمال کے لیے منظورہوئی ہے توبڑے پیمانے پرویکسین کیوں دی جارہی ہے؟پھربغیرفائنل ٹرائل کے منظورکیوں کیاگیا؟ان سوالوں کاجواب نہ بی جے پی دے رہی ہے اورنہ سرکارکے پاس ہے۔ کانگریس کے رکن پارلیمنٹ منیش تیواری نے اے این آئی کو بتایاہے کہ فیز 3 ٹرائل مکمل کیے بغیر اس ویکسین کو منظور نہیں کیاجاناچاہیے تھا۔ منیش تیواری نے کہاہے کہ ہندوستانی سور نہیں ہیں۔انہوں نے کہاہے کہ فیز 3 ٹرائل مکمل کیے بغیر ویکسین کی منظوری سے اس کے اے پی ایف سی (افادیت) کے بارے میں سوالات پیدا ہوتے ہیں۔منیش تیواری نے کہا ہے کہ ویکسین کو ہنگامی استعمال کے لیے لائسنس ملا تھا۔ اب حکومت کہہ رہی ہے کہ آپ فیصلہ نہیں کریں گے کہ آپ کو کون سی ویکسین دی جائے گی۔ جب ویکسین کے فیز 3 ٹرائل مکمل نہیں ہوا تو اس کی افادیت کے بارے میں بہت سارے خدشات ہیں۔ حکومت کو اس وقت تک ویکسین آؤٹ نہیں کرنا چاہیے جب تک کہ اس کی افادیت اور اعتماد پوری طرح سے ثابت نہ ہو اور فیز 3 ٹرائل مکمل ہوجائے۔حکومت کو اس طرح کام کرنا چاہیے کہ لوگوں کو (ویکسین کے حوالے سے) مکمل اعتماد حاصل ہو۔ آپ فیز 3 ٹرائل کی طرح ویکسین کو ختم نہیں کرسکتے۔ ہندوستانی سور نہیں ہیں۔
متنازعہ بیان پرسنگیت سوم کی صفائی کی کوشش
میرٹھ13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
بھارتیہ جنتا پارٹی کے متنازعہ ایم ایل اے سنگیت سوم نے متنازعہ بیان پرہمہ جہتی حملے کے بعد وضاحت پیش کی ہے۔ سنگیت سوم نے کہا تھا کہ اگر مسلمان ملک پر اعتماد نہیں کرتے ہیں تو انہیں پاکستان جانا چاہیے۔ سنگیت سوم اس بیان پر پھنس گئے۔جب سوشل میڈیا پر حملہ ہوا تو سنگیت سوم نے اپنا بیان واضح کیا۔ انہوں نے کہاہے کہ اس کا مطلب یہ نہیں ہے۔سنگیت سوم نے کہا ہے کہ میں نے کہا تھا کہ اگر لوگ اپنے سائنسدانوں ، حکومت ، وزیر اعظم ، فوج اور پولیس پر اعتماد نہیں کرتے ہیں تواس کا مطلب یہ ہے کہ انہیں اپنے ملک پر اعتماد نہیں ہے۔ لہٰذاوہ جہاں چاہتے ہیں وہاں جائیں۔ اگر انہیں پاکستان پر اعتمادہے تو انہیں وہاں جاناچاہیے۔ میں نے جو کہا اس میں کیا حرج ہے؟ ‘بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ایم ایل اے سنگیت سوم نے چنداسی میں نامہ نگاروں سے کہا تھا کہ بدقسمتی سے کچھ مسلمان ملک پر اعتماد نہیں کرتے ، سائنسدانوں ، پولیس اور ملک کے وزیر اعظم پراعتماد نہیں کرتے ہیں۔اگر وہ پاکستان کوچاہتے ہیں توانہیں پاکستان جانا چاہیے لیکن سائنس دانوں پر شک نہ کریں۔
’دل سے معاف نہیں کرپائوں گا‘والی تنبیہ بے اثر،پرگیہ ٹھاکرکا ’گوڈسے پریم‘ پھرچھلکا
گوالیار13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
مدھیہ پردیش کے گوالیارمیں گوڈسے کی ’گیان شالہ ‘کے افتتاح کے حوالے سے سیاسی بیان بازی جاری ہے۔نوبھارت ٹائمزکے مطابق جبکہ کانگریس کے سینئر لیڈر دگ وجے سنگھ نے ناتھورام گوڈسے کوملک کا پہلا دہشت گرد قرار دیا، اس کے جواب میں بھوپال کی رکن پارلیمنٹ پرگیہ ٹھاکر نے پھر وہی متنازعہ بیان دیا جس پر2019 کے لوک سبھا انتخابات کے دوران وزیراعظم نے سخت ناراضگی کااظہارکیاتھااورکہاتھاکہ وہ دل سے کبھی معاف نہیں کرپائیں گے۔اب سوال یہ ہے کہ کیااس باربھی معافی تلافی اوراوپرکے بیان سے کام چلے گا؟ سادھوی پرگیہ نے کہا ہے کہ کانگریس ہمیشہ محب وطن لوگوں کی توہین کرتی ہے۔ آپ کویاددلائیں کہ لوک سبھا انتخابات 2019 کی مہم کے دوران سادھوی پرگیہ نے گوڈسے کو محب وطن قرار دیاتھاجس کے بارے میں انہیں بعد میں معافی مانگنا پڑی۔ یہاں تک کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے کہاہے کہ وہ اس بیان پر انہیں کبھی معاف نہیں کریں گے۔
ہریانہ حکومت بچانے کی کوشش ،دشینت چوٹالہ نے اب مودی سے ملاقات کی
نئی دہلی13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
مرکزی حکومت کے زرعی قوانین کے خلاف احتجاج میں گذشتہ چھ ہفتوں سے جاری مظاہرے کے دوران ہریانہ کے نائب وزیراعلیٰ دشینت چوٹالہ نے وزیر اعظم نریندر مودی سے ملاقات کی۔ ملاقات کے دوران دونوں کے مابین کسانوں کی تحریک کے بارے میں تبادلہ خیال ہوا۔ منگل کو چوٹالہ نے وزیر داخلہ امیت شاہ سے ملاقات کی ہے۔دشینت چوٹالہ پھنسے ہوئے ہیں۔ایک طرف کسانوں کی وجہ سے ان کی پارٹی میں ٹوٹ ہورہی ہے دوسری طرف کرپشن کاالزام جھیل رہے ان کے خاندان کوبھی بچاناہے۔ایسے میں سرکارپربھی بحران ہے۔چوٹالہ ہریانہ میں بی جے پی حکومت میں اتحادی پارٹنر جن نائیک جنتا پارٹی (جے جے پی) کے رہنماہیں۔ یہ خیال کیا جاتا ہے کہ جے جے پی کے کچھ ایم ایل اے پر احتجاج کرنے والے کسانوں کا دباؤ ہے۔مودی اوردشنیت کے مابین تقریباََایک گھنٹے تک بات چیت ہوئی۔ خیال کیا جاتا ہے کہ اس دوران کسانوں کی تحریک کے بارے میں دونوں کے مابین تبادلہ خیال ہوا۔ اس سے قبل ہریانہ میں سات مقامات پر حال ہی میں ہونے والے شہری انتخابات میں بی جے پی اور جے جے پی کو دھچکا لگا تھا۔
سونو سود نے شرد پوارسے ملاقات کی
ممبئی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
فلمی اداکار سونو سود نے نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے سربراہ شرد پوارسے ملاقات کی ہے۔ سونوسود نے کہاہے کہ انہوں نے لاک ڈاؤن کے دوران عوام کے لیے کیے گئے اپنے کام کے بارے میں شرد پوار کو آگاہ کیا۔ رہائشی عمارت کے تجارتی استعمال کو لے کر اس وقت سونو سود اور برہمومبائی میونسپل کارپوریشن کے مابین تنازعہ چل رہا ہے۔ سونو سود نے کورونا کی وبا اور لاک ڈاؤن کے دوران عام شہریوں اور تارکین وطن مزدوروں کی جس طرح مددکی۔ وہ اب بھی لوگوں کے دلوں میں تازہ ہے۔چاروں طرف سونو سود کے طرز عمل کی تعریف کی گئی۔برہمومبائی میونسپل کارپوریشن نے فلمی اداکار سونو سود کے خلاف شکایت کی ہے۔ اس میں ، بی ایم سی نے کہاہے کہ سونو نے ممبئی کے اے بی نیئر روڈ پر واقع شکتی ساگر عمارت کو میٹروپولیٹن کو بتائے بغیر کسی ہوٹل میں تبدیل کیا۔ جب کہ یہ رہائشی عمارت ہے۔ بی ایم سی کے مطابق مہاراشٹرا ریجن اینڈ ٹاؤن پلاننگ ایکٹ کے سیکشن 7 کے مطابق یہ جرم ہے۔ تاہم سونو سودنے ان الزامات کی تردید کرتے ہوئے کہاہے کہ انہوں نے بی ایم سی سے زمین کی ملکیت منتقل کرنے کے لیے اجازت لی ہے اورصرف مہاراشٹرا کوسٹل زون مینجمنٹ اتھارٹی سے ابھی اجازت نہیں مل سکی ہے۔
کابینہ کی توسیع :بی جے لیڈران نے وزیراعلیٰ پرسنگین الزام لگایا
بنگلورو13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
کرناٹک میں کابینہ میں توسیع کو لے کر بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) میں گھمسان مچ گیا ہے۔ بی جے پی کے کچھ ایم ایل اے نے کھل کر بغاوت کی ہے۔ پارٹی کے ایم ایل اے باسانگوڈا یتنل نے وزیراعلیٰ بی ایس یدیورپا پر سنگین الزامات لگائے ہیں۔ انہوں نے کہاہے کہ یدیورپا کو سیاست سے سبکدوش ہونا چاہیے۔ جو بھی بلیک میل کرتا ہے یا رقم دیتا ہے ، اسے وزیربنایاجاتا ہے۔ اس کے لیے ایک کوٹہ ہے۔ باسانگوڈا یتنل نے بتایاہے کہ یہاں ایک سی ڈی کوٹہ ہے اور یہاں ایک سی ڈی کے علاوہ پیسہ کوٹہ ہے۔بسانگودا یتنال کا خوفناک حملہ یہاں نہیں رکا۔ انہوں نے مزیدکہاہے کہ وزیراعلیٰ کو سی ڈی کے ذریعے بلیک میل کیاگیا ہے۔ اسی دوران بی جے پی کے ایک اور ایم ایل اے ، کالاکاپا بانڈی نے بھی کابینہ میں توسیع پر برہمی کا اظہار کیاہے۔انہوں نے کہا کہ میں پارٹی کا وفادار سپاہی ہوں۔ میں کابینہ میں توسیع سے خوش نہیں ہوں۔ اس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔وزیراعلیٰ بی ایس یدیورپا طویل عرصے سے کابینہ کی توسیع کرنا چاہتے تھے۔ آج 7 نئے وزراکی حلف برداری ہوئی ہے۔کرناٹک کے بی جے پی کے بہت سے رہنما وزراء کے ناموں پر ناراض ہیں۔
کسان تحریک پرسمبت پاترانے کہا،بی جے پی نے فیصلہ قبول کیا،فریق ثانی بھی قبول کرے
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ترجمان سمبت پاترانے تینوں زرعی قوانین کے نفاذ پر پابندی عائد کرنے پرسپریم کورٹ کے حکم پراپنا رد عمل ظاہر کیا ہے۔ سمبت پاترانے کہاہے کہ نوں کی تحریک سے متعلق سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا ، بی جے پی اس فیصلے کو قبول کرتی ہے۔ عدالت کا وقار قوم کا وقار ہے۔ ہمیں امید ہے کہ دوسرا فریق عدالت کے فیصلے کو قبول کرے گااورسبھی مذاکرات کے راستے پرآگے بڑھیں گے۔ بی جے پی کے ترجمان نے کہا ہے کہ وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت کاہدف کسان اور غریب کی ترقی ہے۔کسان کی آمدنی دوگناکرنے کے لیے دن رات کام کیا۔ اس پر اور بھی کام ہوگا۔ہندوستان خود کفیل ہوجائے گا ۔اس کے لیے ہمیں تمام اداروں پراعتمادکرناہوگا۔
کسانوں کی شہادت نہیں ، ٹریکٹر ریلی کی وجہ سے حکومت شرمندہ؟ راہل گاندھی کاتیکھاسوال
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
کسانوں کے احتجاج کا آج 49 واں دن ہے۔ نئے زرعی قوانین کی واپسی کا مطالبہ کرتے ہوئے پنجاب سمیت متعددریاستوں کے کسان دہلی کی سرحد پرجمے ہوئے ہیں۔ اپوزیشن جماعتیں کسانوں کے ساتھ کندھے سے کندھاملاکرکھڑی ہیں۔ اس تحریک کے دوران اب تک 60 سے زیادہ کسان ہلاک ہوچکے ہیں۔ کانگریس کے سابق صدرراہل گاندھی کسان تحریک کے معاملے پر مودی سرکار پر حملہ آور ہیں۔ اب سے کچھ دیر پہلے انھوں نے ایک بار پھر ٹویٹ کرکے مرکز کو نشانہ بنایا ہے۔راہل گاندھی نے ٹویٹ کیا ہے کہ مودی سرکار کو 60 سے زیادہ کسانوں کی شہادت سے شرمندگی نہیں ہے، لیکن وہ ٹریکٹر ریلی سے شرمندہ ہے۔ ایک اور ٹویٹ میں راہل گاندھی نے کہاہے کہ کیا ان لوگوں سے انصاف کی توقع کی جاسکتی ہے جنھوں نے زرعی مخالف قوانین کی حمایت کی ہے۔ یہ جدوجہدکسان مخالف قوانین کے خاتمے تک جاری رہے گی۔
ریسٹورنٹ میں چکن اورانڈوں پرپابندی ،بصورت دیگر کارروائی ہوگی
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
ملک کی نصف درجن سے زیادہ ریاستوں میں برڈ فلوکے انفیکشن کا بحران پیدا ہوگیا ہے۔ ان ریاستوں کی صورتحال سے نمٹنے کے لیے اقدامات کیے جارہے ہیں۔ دریں اثنا دہلی میں شمالی میونسپل کارپوریشن نے ہوٹلوں اور ریستوراں کو چکن اور انڈوں کی سروس نہ دینے کاحکم جاری کیا ہے ، بصورت دیگر ان کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔ یہ حکم برڈ فلوپھیلنے کے تناظرمیں آیاہے۔گوشت کی فروخت کرنے والے مقامی دکان داروں کے لیے آرڈر میں یہ بھی کہاگیا ہے کہ وہ مرغی اورچکن کی درآمدنہ کریں ، بصورت دیگر ان کا لائسنس منسوخ کردیا جائے گا۔جاری کردہ حکم میں کہا گیا ہے کہ 10 ریاستوں میں برڈفلو کی وجہ سے قومی دارالحکومت دہلی میں پولٹری کا بازار بند کر دیا گیا ہے تاکہ اس کے ممکنہ انفیکشن سے بچا جا سکے اور شہریوں کی حفاظت کی جاسکے۔ شمالی دہلی میونسپل کارپوریشن نے اپنے علاقے میں گوشت کی تمام دکانوں ، گوشت پروسیسنگ یونٹوں میں مرغی کی فروخت پر مکمل پابندی عائد کردیا ہے۔
انتخابی ریاستوں پرنظر،نڈاآج چنئی میں ’پونگل‘ منائیں گے
نئی دہلی13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
بی جے پی صدر جے پی نڈا 14 جنوری کوانتخابی ریاست تمل ناڈو کا ایک روزہ دورہ کریں گے اور پونگل کے موقع پر چنئی میں پارٹی کی ریاستی اکائی کے زیر اہتمام ایک پروگرام میں شرکت کریں گے۔مغربی بنگال اورتمل ناڈومیں الیکشن ہونے والے ہیں۔بی جے پی کے قومی میڈیا انچارج اورراجیہ سبھاکے ممبرانیل بلوونی نے ایک بیان جاری کرتے ہوئے کہاہے کہ نڈامغربی چنئی ضلع کے مدوراوئیل میں پونگل میں پارٹی کے زیر اہتمام پونگل پروگرام میں شریک ہوں گے۔انہوں نے بتایاہے کہ نڈا چنئی میں ایک میگزین کی 51 ویں سالگرہ کے موقع پرمنعقدہ ایک پروگرام سے بھی خطاب کریں گے۔معلوم ہوکہ کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی بھی 14 جنوری کو’پونگل‘ کے دن تمل ناڈوکے دورے پرآئیں گے۔ وہ مدورائی ضلع کے اونی پورم میں جلی کٹٹوپروگرام میں شریک ہوں گے۔
انکائونٹرمیںنکسلی ہلاک
رائے پور13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
چھتیس گڑھ کے نکسل متاثرہ ضلع دانتے واڑہ میں سیکیورٹی فورسزنے ایک مقابلے میں پانچ لاکھ روپے کی انعامی رقم کوہلاک کردیا۔دنتے واڑہ کے ضلع سپرنٹنڈنٹ پولیس ابھیشیک پالووانے بدھ کے روزبتایاہے کہ سیکیورٹی فورسزنے ضلع کے ایریاکمیٹی کی ممبر کو ہلاک کردیا ہے۔پولیس نے بتایاہے کہ اس کے سر پر پانچ لاکھ روپے انعام ہے۔اس افسر نے بتایاہے کہ علاقے میں نکسلیوں کے خلاف آپریشن میں ڈی آر جی اور چھتیس گڑھ کی مسلح افواج کی مشترکہ ٹیم روانہ کردی گئی ہے۔انہوں نے کہاہے کہ جب ٹیم دیہات کے درمیان درمیانی جنگل میں تھی تو نکسلیوں نے سکیورٹی فورسز پر فائرنگ شروع کردی جس کے بعد سکیورٹی فورسز نے بھی جوابی کارروائی کی ہے۔انہوں نے بتایاہے کہ کچھ دیرسے دونوں طرف سے فائرنگ ہوئی جس کے بعد نکسلی وہاں سے فرار ہوگئے ، بعدازاں جب سیکیورٹی فورسز نے موقع کی تلاشی لی تو وہاں نکسلی کی لاش اور پستول برآمد ہوئے۔انہوں نے کہا کہ علاقے میںنکسلیوں کے خلاف مہم جاری ہے۔
پٹرول کی شرح میں اضافے کاسلسلہ جاری
نئی دہلی13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
قومی دارالحکومت میں پٹرول کی قیمت 84.45 روپے فی لیٹر کی نئی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی ہے۔ پبلک سیکٹر کی پٹرولیم کمپنیوں نے بدھ کے روز پانچ دن کے بعد ایک بار پھر ایندھن کی قیمتوں میں اضافہ کیا۔پٹرولیم مارکیٹنگ کمپنیوں کی قیمتوں کے نوٹیفکیشن کے مطابق پیٹرول اور ڈیزل دونوں کی قیمتوں میں 25-25 پیسے فی لیٹر کااضافہ کیاگیا ہے۔ دہلی میں اب پیٹرول کو 84.45 روپے فی لیٹر اور ڈیزل کو 74.63 روپے فی لیٹر کردیا گیا ہے۔ممبئی میں پٹرول کی قیمت 91.07 روپے فی لیٹراور ڈیزل 81.34 روپے فی لیٹر ہوگئی ہے۔دہلی میں اب پٹرول کی قیمتیں سب سے اونچی ہیں۔ اسی دوران ممبئی میں ڈیزل کی قیمت ریکارڈ سطح پرپہنچ گئی ہے۔پٹرول کی قیمت میں مسلسل دو دن 49 پیسے فی لیٹر اور ڈیزل میں 51 پیسے فی لیٹر کا اضافہ ہواہے۔مسلسل سات دن تک عالمی سطح پر خام تیل کی قیمتوں میں اضافے کے بعد گاڑیوں کے ایندھن کی قیمتوں میں اضافے کا سلسلہ دوبارہ شروع ہوا ہے۔
وزیراعظم نے 5 سال مکمل ہونے پر پی ایم-ایف بی وائی کے مستفیدین کو مبارکباد پیش کی
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
وزیراعظم نریندر مودی نے پی ایم –ایف بی وائی فصل بیمہ یوجنا کے تمام صارفین کو 5 سال مکمل ہونے پرمبارکباد دی ہے۔ایک سے زیادہ ٹوئیٹس کے ذریعہ وزیراعظم نے کہاہے کہ محنت کش کسانوں کو فطرت کی نا خوشگوار اور غیر متوقع تبدیلیوں سے نجات دلانے کے لیے ایک اہم اقدام کے طور پر فصل بیمہ یوجنا نے آج اپنے 5 سال پورے کرلیے۔ اس دوران یوجناکے کوریج میں اضافہ ہوا ہے، جس سے کروڑوں کسانوں کا خطرہ کم ہوا ہے اور انہیں فائدہ پہنچا ہے۔ میں اس اسکیم سے تمام مستفیدہونے والوں کو مبارکباد دیتا ہوں۔وزیراعظم نے کہاہے کہ فصل بیمہ یوجنا نے کسانوں کے لیے زیادہ سے زیادہ فائدے کو کس طرح یقینی بنایا ہے۔دعوؤں سے نمٹنے میں شفافیت کو کس طرح فروغ دیا گیا۔ان باتوں کا اور پی ایم-ایف بی وائی سے متعلق دیگر پہلوؤں کا جواب نمو ایپ کے آپ کی آواز سیکشن میں جدیدمواد کے ساتھ جواب دیا گیا ہے۔
کابینہ نے ہندوستان اورمتحدہ عرب امارات کے درمیان مفاہمت نامے کو منظوری دی
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
وزیراعظم نریندر مودی کے زیر قیادت مرکزی کابینہ نے سائنسی تکنیکی تعاون سے متعلق مفاہمت نامے کو منظوری دے دی ہے جو موسمیات کے قومی مرکز( این سی ایم)، متحدہ عرب امارات (یو اے ای) اور ہندوستان کی اراضی سائنسز کی وزارت(ایم او ای ایس) کے درمیان طے پایا ہے۔مفاہمت نامہ معلومات ، اعداد وشمار اور موسمیات ،زلزلے سے متعلق اور سمندری خدمات کے لیے آپریشن جاتی مصنوعات ساجھا کرنے کی راہ ہموار کرے گا جس میں راڈار، سیٹلائٹ، لہروں کو ناپنے کاآلہ اورزلزلے اور موسمیات کے اسٹیشن شامل ہیں۔تحقیق ،تربیت، صلاح و مشورے، موسمیات کی معلوماتی خدمات پر توجہ مرکوزکرنے، سمندری طوفانوں کی پیشگوئی کے لیے سیٹیلائٹ کے اعداد وشمار کو استعمال کرنے کے مقصد سے سائنسدانوں،تحقیق کاروں اور ماہرین کے ذمے تجربے اور دوروں کاتبادلہ، مفاد عامہ کی سرگرمیوں سے متعلق سائنسی اور تکنیکی معلومات کاتبادلہ،مفاہمت نامہ میں بیان کردہ نیز دونوں ممالک کے مفاد میں تعاون کے شعبے سے تعلق رکھنے والے متعلقہ مسائل پر باہمی سائنسی اور تکنیکی سیمینار، ورک شاپ، کانفرنسوں اور تربیتی کیمپوں کا انعقاد کرنا، تعاون کے دیگر شعبے جو کہ فریقین کے ذریعہ باہمی طور پر اتفاق رائے سے طے کیے جائیں،سمندری پانی پر باہمی سمجھوتے سے متعلق موسمیاتی مشاہداتی نیٹ ورک کی تنصیب، ہندوستان اور شمال مشرقی متحدہ عرب امارات کے ساحلی علاقوں کو متاثر کرنے والے سنامی کی تحقیق کے لیے عمان کے سمندر اور بحرعرب کے ذریعہ پیدا ہونے والے سنامی کی تیز تر اور زیادہ قابل بھروسہ پیشگوئی کے لئے خصوصی صلاحیت والے سنامی ماڈل کو تیار کرنے میں تعاون کرنا، پیشگوئی کے ماڈلنگ کے سافٹ ویئر کی شکل میں سنامی کی پہلے سے وارننگ کے مرکز(ٹی ای ڈبلیو سی) کو مدد دینے میں تعاون جسے خصوصی طور پر سنامی کی پیشگوئی کی کارروائیوں کو حمایت فراہم کرنے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے،زلزلے سے متعلق ان سرگرمیوں کی نگرانی کے لئے ہندوستان کے جنوب اور مغرب اور یو اے ای کے جنوب میں واقع زلزلے سے متعلق اسٹیشنوں میں سے کچھ کے زلزلے سے متعلق ریئل ٹائم اعداد وشمار کو ساجھا کرنا جن کے باعث بحر عرب اوربحر عمان میں سنامی آسکتی ہے۔زلزلے سے متعلق سائنس کے شعبے میں تعاون کردہ جس میں زلزلے سے متعلق ان سرگرمیوں کا مطالعہ شامل ہیں جو بحرہ عرب میں سنامی کی لہریں پیدا کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔
مرکزی وزیر تعلیم نے نئی تعلیمی پالیسی -2020 کے نفاذکا جائزہ لیا
نئی دہلی13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
مرکزی وزیرتعلیم رمیش پوکھریال نشانک نے وزارت کے اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ نئی تعلیمی پالیسی 2020 پر عمل درآمدکاجائزہ لیاہے۔میٹنگ کے دوران وزیر نے وزارت تعلیم کے اعلیٰ تعلیم اور اسکولی تعلیم کے لیے محکموں کے مابین قومی تعلیمی پالیسی کے نفاذ کو مربوط کرنے کے لیے ایک ٹاسک فورس کے تشکیل کی سفارش کی ہے تاکہ اسکول کی تعلیم سے اعلیٰ تعلیم تک طلبہ خوش اسلوبی کے ساتھ مراحل طے کر سکیں۔وزیرنے تجویز رکھی کہ اعلیٰ تعلیم کے محکمے کے سکریٹری کی قیادت میں ایک جائزہ کمیٹی اور ایک نفاذ کمیٹی تشکیل دی جائے تاکہ نئی تعلیمی پالیسی پر عمل میں تیزی لانے کو یقینی بنایا جا سکے۔پوکھریال نے پیکیج کلچر سے پیٹنٹ کلچر کی طرف توجہ مبذول کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ نیشنل ایجوکیشن ٹیکنالوجی فورم (این ای ٹی ایف) اور نیشنل ریسرچ فاؤنڈیشن (این آر ایف) پالیسی کی کامیابی کے لئیلازمی ادارے ہیں۔ لہٰذاسال 22-2021 میں ان کا قیام عمل میں لایا جائے۔ انہوں نے ذمہ داروں پر زور دیاہے کہ وہ نئی تعلیمی پالیسی اور حکومت کی موجودہ پالیسیوں کے نفاذ کے درمیان مطابقت کو یقینی بنائیں۔ انہوں نے بہتر نتائج کے لیے صنعت اور تعلیمی اداروں کے درمیان رابطے پر بھی زور دیا۔اعلیٰ تعلیم میں نفاذکے لیے مجموعی طور پر 181 ذمہ داریوں کی شناخت کی گئی۔نئی تعلیمی پالیسی کی ان شناخت شدہ 181 ذمہ داریوں کے محاذ پر پیش رفت کا واضح ٹائم لائن اور نشانوں کے ساتھ نگرانی کرنے کے لیے ایک ڈیش بورڈتیارکیاجاسکتاہے۔ذمہ داریوں پر عمل درآمد کے لئے ایک ماہانہ یا ہفت روزہ کلینڈر تیار کیا جائے تاکہ ہر متعلق ذمہ داراس کے نفاذ کے تعلق سے تازہ بہ تازہ صورتحال سے با خبرہے۔
آل انڈیا ریڈیو کے کسی بھی اسٹیشن کوبند نہیں کیا جارہا ہے،پرسار بھارتی کی وضاحت
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
آج پرساربھارتی نے یہ واضح کیاہے کہ آل انڈیاریڈیو کے کسی بھی اسٹیشن کو کسی بھی ریاست میں بند نہیں کیاجارہاہے۔ہندوستان بھر میں مختلف ذرائع ابلاغ کے ذریعے آل انڈیا ریڈیو کے اسٹیشنوں کو بند کرنے کے دعویٰ کرنے والی غلط رپورٹنگ اور خبروں کا سنجیدہ نوٹس لیتے ہوئے، پرسار بھارتی نے یہ بات واضح کی ہے کہ یہ خبریں بے بنیاداورقطعی طورپر غیر درست ہیں۔پرسار بھارتی نے مزید کہا ہے کہ کسی بھی ریاست یا مرکز کے زیر انتظام علاقے میں کسی بھی آل انڈیا ریڈیو کے اسٹیشن کو نہ تو ڈاؤن گریڈ اور نہ ہی اسے تبدیل کیا جارہا ہے۔مزید برآں آل انڈیا ریڈیو کے تمام اسٹیشن لسانی ،سماجی ثقافتی اور جغرافیائی تنوع کے مطابق مقامی پروگراموں کا سلسلہ نشر کرنا جاری رکھیں گے، جن کا مقصد مقامی ٹیلنٹ کی نگہداشت کو مستحکم کرنے کے آل انڈیا ریڈیو کے مشن کو جاری رکھنا ہے۔پرساربھارتی نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ وہ آکاش وانی، آل انڈیا ریڈیو، آل انڈیا ریڈیو نیٹ ورک کو مستحکم کرنے کے اپنے منصوبوں کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے ، جن میں سے بہت سے کلیدی پروجیکٹ 2022-2021ء کے دوران نفاذکے لیے تیار ہیں، جس سے ملک بھر میں 100 سے زیادہ نئے ایف ایم ریڈیو ٹرانسمیٹر کے نیٹ ورک کو توسیع دینا شامل ہے۔سینکڑوں اسٹیشنوں اور سینکڑوں ریڈیو ٹرانسمیٹروں پرمشتمل آل انڈیا ریڈیو نیٹ ورک دنیا کے سب سے بڑے عوامی نشریاتی خدمات کے نیٹ ورکوں میں سے ایک ہے، جو کثیر رخی موڈ میں خدمات فراہم کرتا ہے۔ جن میں ٹیرسٹیریل انالوگ ریڈیو(ایف ایم ، ایم ڈبلیو، ایس ڈبلیو)، سٹیلائیٹ ڈی ٹی ایچ ریڈیو(ڈی ڈی مفت ڈش ڈی ٹی ایچ)، انٹرنیٹ ریڈیو(آئی او ایس اینڈرائیڈ پر نیوزآن ایئر ایپ) شامل ہیں۔ڈی ڈی مفت ڈش ڈی ٹی ایچ سروس پر 48 سٹیلائٹ ریڈیو چینلوں کی دستیابی کے ساتھ ہندوستان بھر سے مقامی اور علاقائی آوازیں ریڈیو اسٹیشنوں پر اب ملک گیر پلیٹ فارم پر سنی جاسکتی ہیں، تاکہ لوگ اْنہیں سن سکیں۔پرسار بھارتی ہندوستان میں ڈیجیٹل ٹیرسٹیریل ریڈیو متعارف کرانے کے اپنے منصوبے کے ساتھ آگے بڑھ رہا ہے۔پرسار بھارتی ایف ایم ریڈیوکے لیے ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کے اختیارات کی ٹیسٹنگ کے ایڈوانس مرحلے میں بھی ہے اور اس کے لیے ایک معیار کو جلد ہی حتمی شکل دی جائے گی تاکہ ہندوستان نے ڈیجیٹل ایف ایم ریڈیو کی شروعات کی جاسکے۔
کیرالہ اصلاحات کی تکمیل کرنے والی آٹھویں ریاست بنی
نئی دہلی 13جنوری(آئی این ایس انڈیا)
کیرالہ ، ملک کی ایسی ااٹھویں ریاست بن گیا ہے، جس نے وزارت خزانہ کے محکمہ اخراجات کے ذریعہ وضع کردہ کاروبار کرنے کو آسان بنانے سے متعلق اصلاحات کی کامیابی کے ساتھ تکمیل کرلی ہے۔اس طرح سے ریاست کھلے بازارسے قرض حاصل کرنے کے نظام کے ذریعہ 2373 کروڑ روپے کے اضافی مالی وسائل حاصل کرنے کی اہل بن گئی ہے۔ 12 جنوری 2021 کو محکمہ اخراجات کے ذریعہ اس کی اجازت بھی دے دی گئی ہے۔ کیرالہ اب آندھراپردیش ، کرناٹک ، مدھیہ پردیش ، اوڈیشہ ، راجستھان ،تمل ناڈو اور تلنگانہ جیسی اْن سات دیگر ریاستوں میں شامل ہوگیا ہے، جنہوں نے ان اصلاحات کی تکمیل کرلی ہے۔ کاروبارکرنے کو آسان بنانے سے متعلق اصلاحات کی تکمیل کے بعد ان آٹھ ریاستوں کو23149 کروڑروپے کااضافی قرض حاصل کرنے کی اجازت دے دی گئی ہے۔اضافی قرض حاصل کرنے کی جو اجازت دی گئی ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں